احرام کے مواقیت پانچ مقامات ہیں :

سایٹ دفتر حضرت آیة اللہ العظمی ناصر مکارم شیرازی

صفحه کاربران ویژه - خروج
ذخیره کریں
 
مناسک عمره مفرده
میقاتوں کے احکام احرام کے میقات

۱ ۔ مسجد شجرہ


مسئلہ 25 ۔ مسجدہ شجرہ مدینہ کے کنارے واقع ہے اور آج آبار علی کے نام سے معروف ہے اور اس کو ذو الحلیفہ بھی کہتے ہیں وہ تمام افراد جو مدینہ کے راستے حج کو جانا چاہتے ہیں لازم ہے کہ وہاں سے محرم ہوں اور احرام کو تاخیر میں ڈالنا جائز نہیں ہے کہ مثلا جحفہ سے کہ مکہ اور مدینہ کے درمیان ہے محرم ہوں مگر بیمار و ضعیف افراد اور وہ لوگ جو دوسرے موانع رکھتے ہیں اور مسجد شجرہ سے محرم نہیں ہو سکتے ہیں
مسئلہ 26 ۔ واجب نہیں ہے کہ احرام مسجد شجرہ کے اندر سے ہو بلکہ مسجد کے کنارے سے احرام باندھا جاسکتا ہے اور مسجد سابق اور آج کی مسجد کے درمیان کہ کافی توسیع ہوئی ہے کوئی فرق نہیں ہے بنابر این وہ عورتیں جو عادت ماہانہ میں گرفتار ہیں مسجد کے باہر سے احرام باندھ سکتی ہے
مسئلہ 27 ۔ شحص جنب یا حائض مسجد کو عبور کرنے کی حالت میں محرم ہو سکتا ہے اور لازم ہے کہ مسجد میں توقّف نہ کرے جس طرح مسجد کے باہر سے محرم ہو سکتا ہے
مسئلہ 28 ۔ چنانچہ مجنب یا حائض کثرت جمعیت کی وجہ سے مسجد سے گزر نے کی حالت میں احرام نہ باندھ سکے اور کچھ علل و اسباب کی بناء پر غسل کرنے میں بھی کامیاب نہ ہو تو چاہے تو غسل حیض یا جنابت کے بدلے تیمم کرے اور مسجد کے اندر سے محرم ہو اور مسجد کے باہر سے بھی محرم ہو سکتا ہے
مسئلہ 29 ۔ احتیاط مستحب یہ ہے کہ خود مسجد شجرہ سے محرم ہو ، نہ مسجد کے اطراف و جوانب سے اور مستحب ہے کہ مسجد کی قدیمی اور اصلی جگہ سے احرام باندھے ، ہر چند مسجد کے توسیع شدہ حصّوں بلکہ مسجد کے باہر سے بھی جیسا کہ عرض کیا احرام باندھا جا سکتا ہے
سوال 30 : اگر زن حائض یا مجنب شخص عمداً اور عصیاناً وارد مسجد شجرہ ہو اور دوسروں کی طرح وہاں توقّف کرے اور محرم ہو تو کیا اس کا احرام صحیح ہے ؟
جواب : اگر عمداً ہو تو اشکال سے خالی نہیں ہے لیکن جیسا کہ پہلے عرض کیا مسجد کے باہر سے بھی احرام جائز ہے

۲ ۔ جحفہ


مسئلہ 31 ۔ ” جحفہ “ مکہ و مدینہ کے درمیان مکہ سے ۱۵۰ کلو میٹر کے فاصلے پر ایک مقام ہے اور اس وقت اصلی راستے سے تھوڑا فاصلے پر واقع ہے اور وہاں پر ایک بڑی مسجد تعمیر کی گئی ہے اور وہ ان لوگوں کا میقات ہے جو مصر ، شمال افریقہ ، سوریہ اردن او رلبنان سے زمینی راستے سے حج کرنے آتے ہیں بلکہ ان تمام لوگوں کا میقات ہے جو وہاں سے عبور کرتے ہیں
مسئلہ 32 ۔ ایرانی مسلمان اور دنیا کے ہر ملک کے مسلمان جو ہوائی جہاز کے ذریعے جدہ ایرپورٹ پر اترتے ہیں او رمدینہ نہیں جانا چاہتے ہیں جحفہ جا کر وہاں سے محرم ہو سکتے ہیں پھر اس کے بعد مکہ جائیں ، ایسے لوگ جدہ یا حدیبیہ سے عمرہٴ تمتع کے لئے محرم نہیں ہو سکتے ہیں
مسئلہ 33 ۔ جیسا کہ عرض ہوا جحفہ میں ایک مسجد ہے جس کے باہر یا اندر سے احرام باندھا جا سکتا ہے اور بہتر مسجد کے اندر سے ہے لیکن حائض عورتیں مسجد کے باہر سے محرم ہوں گی -


۳ ۔ وادیٴ عقیق


مسئلہ 34 ۔ وادیٴ عقیق مکہ کے شمال مشرق میں کہ مکہ سے تقریبا ۹۴ / کلو میٹر کے فاصلے پر واقع ہے ، ایک مقام ہے ، اور وہ اہل عراق اور نجد کے لوگوں کا میقات ہے اور تمام وہ افراد جو وہاں سے عبور کرتے ہیں وہاں سے احرام باندھ سکتے ہیں یہ میقات تین حصوں پر مشتمل ہے
پہلا حصہ ” مسلخ “ کہلاتا ہے اور دوسرا حصہ ” غمرہ “ اور تیسرے حصے کو ” ذات عرق “ کہتے ہیں ان تمام جگہوں سے احرام باندھنا جائز ہے ، ہر چند ” مسلخ “ سے احرام باندھنا افضل ہے


۴ ۔ قرن المنازل :


مسئلہ 35 ۔ قرن المنازل طائف کے نزدیک ایک مقام ہے کہ مکہ سے تقریبا ۹۴ / کلو میٹر کے فاصلے پر واقع ہے اور وہ وہاں کے لوگوں یا ان لوگوں کا میقات ہے جو وہاں سے عبور کرتے ہیں بلکہ تمام وہ لوگ جو جدہ اترتے ہیں وہاں جا کر وہاں سے احرام باندھ سکتے ہیں اس وقت بھی وہاں ایک مسجد موجود ہے کہ سب وہاں سے محرم ہو سکتے ہیں -


۵ ۔ یلملم


مسئلہ 36 ۔ یلملم ایک پہاڑ کا نام ہے جو نواحی جنوبی مکہ میں مکہ سے ۸۴ / کلو میٹر کے فاصلہ پر واقع ہے اور وہ ان لوگوں کا میقات ہے جو جنوب شبہ جزیرہٴ عربستان سے جیسے یمن سے مکہ کی سمت آتے ہیں اور وہ تمام افراد بھی جو وہاں سے گزرتے ہیں وہاں سے محرم ہو سکتے ہیں یہ پانچوں میقات عمرہٴ تمتع کے اصلی میقات ہیں -


6 ۔ ادنیٰ الحلّ


ادنی الحل یعنی حرم کے باہر کا اولین نقطہ ان لوگوں کا میقات ہے جو عمرہٴ مفردہ بجالا تے ہیں .
مسئلہ 37 ۔ بہتر یہ ہے کہ عمرہٴ مفردہ کے لئے حدیبیہ جعرانہ اور تنعیم میں سے کسی ایک جگہ سے احرام باندھیں کہ اہل مکہ کے نزدیک معروف ہے اور ان لوگوں کے لئے جو چاہتے ہیں کہ حج کے بعد عمرہٴ مفردہ بجا لائیں آسان تر یہ ہے کہ مسجد تنعیم جائیں کہ تقریبا مسجد الحرام سے ۸ / کلو میٹر کے فاصلہ پر واقع ہے اور در حال حاضر شہر مکہ کا جزء ہے اور وہاں سے محرم ہوں
مسئلہ 38 ۔ جو لوگ جدہ کے راستے سیدھے عمرہٴ مفردہ کے لئے مکہ جاتے ہیں ان لوگوں کو حدیبیہ سے محرم ہو نا چاہئے جو مکہ سے تقریبا ۱۷ / کلو میٹر کے فاصلے پر ہے ( حدیبیہ حرم کی دور ترین حدّ ہے ) (2)
مسئلہ 39 ۔ جدہ میں کام کرنے والے ایرانیوں اور تمام ممالک کے مسلمانوں عمرہٴ مفردہ کے لئے دوسرے لوگوں کی مانند حدیبیہ یا جدید روڈ میں اس کے محاذی سے محرم ہوں اور اگر مسئلہ نہ جاننے کی وجہ سے کہیں اور سے محرم ہوں ، ان کا احرام صحیح نہیں ہے اور محرمات احرام ان پر حرام نہ ہوں گے اور علم و عمد کی صورت میں بھی مسئلہ یہی ہے لیکن جہالت اور لا علمی کی صورت میں اگر اعمال کے بعد مسئلہ کو سمجھیں تو ان کے اعمال صحیح ہیں
میقاتوں میں سے کسی ایک میقات کے محاذی و مقابل
مسئلہ 40 ۔ جو لوگ میقات سے نہیں گزرتے ہیں جب کسی ایک میقات کے مقابل اور سامنے پہونچیں تو لازم ہے کہ وہاں سے محرم ہو ں اور پانچوں میقاتوں میں سے کسی ایک میقات پر جانا ضروری نہیں ہے اور اگر دو میقات کے سامنے سے گزرتے ہیں تو لازم ہے کہ جب پہلے میقات کے محاذی ہوں تو احرام باندھیں اور بعد والے میقات کے محاذات میں نیت احرام کی تجدید کریں
مسئلہ 41 ۔ جو لوگ مسجد شجرہ کے علاوہ کسی اور میقات کے محاذات اور سامنے سے عبور کرتے ہیں ، احتیاط مستحب یہ ہے کہ محاذات میں پہونچنے سے پہلے نذر کے ذریعے محرم ہو جائیں اور بہتر یہ ہے کہ محاذات میں تجدید احرام کریں ( لیکن واجب نہیں ہے )
مسئلہ 42 ۔ مکہ کی طرف جانے والے کے لئے محاذات سے مراد یہ ہے کہ ایسی جگہ پہونچ جائے کہ میقات اس کے داہنے یا بائیں واقع ہو اس طرح سے کہ اگر اس نقطہ سے عبور کرے تو میقات اس کی پشت کی طرف مائل ہو
مسئلہ 43 ۔ اگر محاذات کو نہ جانے تو لازم ہے ، مورد اطمینان اہل اطلاع سے سوال کرے اور اگر محاذات کو تشخیص نہ دے سکے تو اس جگہ پہونچنے سے پہلے کہ جس کے محاذات ہونے کا احتمال دیتا ہے بناء بر احتیاط نذر کے ذریعے محرم ہو جائے
مسئلہ 44 ۔ اگر کسی ایسے راستے سے گزرے کہ کسی بھی میقات کے محاذی نہیں ہے ( جیسے جدہ ) احتیاط یہ ہے کہ میقات جائے اور وہاں سے محرم ہو کسی ایسی جگہ جائے جو کسی میقات کے محاذی ہو، اور اگر وہ بھی ممکن نہ ہو تو جس جگہ کسی ایک میقات کے محاذی ہونے کا احتمال دیتا ہو وہاں سے محرم ہو پھر اولین نقطہٴ حرم ( اطراف مکہ میں ) پہونچ کر اپنے احرام کی تجدید کرے ( یعنی دوبارہ نیت کرے اور لبیک کہے )
مسئلہ 45 ۔ محاذات میقات کے مسئلہ میں صحراء اور دریا کے درمیان کوئی فرق نہیں ہے
مسئله 46 ۔ محاذات علم و یقین اور دو شاہد عادل کی شہادت سے ثابت ہوتا ہے اور اگر ان دونوں راہ سے ثابت نہ ہو تو اگر ان لوگوں کے قول سے جو ان مقامات سے آگاہی رکھتے ہیں گمان قوی حاصل ہو ، کافی ہے اسی طرح ان لوگوں کے قول سے کہ اہل خبرہ ہیں اور قواعد علمی کی رو سے محاذات کی تعیین کرتے ہیں اگر گمان قابل ملاحظہ حاصل ہو ، ظاہراً کافی ہے
مسئلہ 47 ۔ اگر ثابت نہ ہو کہ ” رابغ “ جحفہ کے محاذی ہے ، احرام اس جگہ سے صحیح نہیں ہے -

 


(۱) وظیفہٴ مستحاضہ ، حائض اور جنب کا بیان شرائط طواف کے استفتاء ات کے حصہ میں صفحہ ۱۸۲ کے بعد ہوا ہے .
(2) حدبیہ جدہ و مکہ کے جادہ قدیم کے کنارہ واقع ہے اور اس کے محاذی جادہ جدید میں پل شمبشہ کے نزدیک ایک مسجد بنائی گئی ہے کہ اس کے محاذی ہے اور وہاں سے محرم ہوا جا سکتا ہے
 
میقاتوں کے احکام احرام کے میقات
12
13
14
15
16
17
18
19
20
Lotus
Mitra
Nazanin
Titr
Tahoma