١۔خدا غنی مطلق ہے ۔

سایٹ دفتر حضرت آیة اللہ العظمی ناصر مکارم شیرازی

صفحه کاربران ویژه - خروج
ذخیره کریں
 
تفسیر نمونہ جلد 22

ما أُریدُ مِنْہُمْ مِنْ رِزْقٍ وَ ما أُریدُ أَنْ یُطْعِمُون کاجملہ حقیقت میں پروردگار کی ہرشخص اورہر چیز سے بے نیاز ی کی طرف اشارہ ہے . اور اگر اس نے اپنے بندوں کواپنی عبودیت کی دعوت دی ہے ،تویہ اس لیے نہیں ہے کہ وہ اس سے کوئی فائدہ حاصل کرے، بلکہ وہ توانسانوں کے درمیان مسئلہ عبودیت کے برعکس، یہ چاہتاہے کہ ان پر سخاوت اور بخشش کرے ،کیونکہ لوگ غلاموں کواس لیے انتخاب کرتے تھے تاکہ وہ ان کے لیے آمدنی کے حصول اوررزق و روزی کے لیے کام کریں، یاگھرکا کام کاج کریں، اورکھلا ناکھلانے اور پذیرائی کرنے میں مشغول رہیں، اوردونوں حالتوں میں اس کا فائدہ مالکوں کوہی ہوتاہے،اور یہ چیز انسان کی نیاز اور احتیاج سے پیدا ہوتی ہے ۔لیکن یہ سب چیزیں خدا کے بارے میں بے معنی ہیں، کیونکہ نہ صرف یہ کہ وہ سب سے بے نیاز ہے ،بلکہ سب کی نیاز اورحاجت کواپنے لطف وکرم سے پورا کرتاہے، اور سب کارزاق وہی ہے ۔
12
13
14
15
16
17
18
19
20
Lotus
Mitra
Nazanin
Titr
Tahoma