۱۔ موٴمن آل ِفرعون کون تھا ؟

سایٹ دفتر حضرت آیة اللہ العظمی ناصر مکارم شیرازی

صفحه کاربران ویژه - خروج
ذخیره کریں
 
تفسیر نمونہ جلد 20
۲۔ تقیّہ ... مقابلے کاایک موٴثر ذریعہ آیا کسی کو خدا کی طرف بلانے پر بھی قتل کرتے ہیں ؟

قرآنی آیات سے اس قدرمعلوم ہوتاہے کہ وہ آل ِ فرعون میں سے تھا جو موسٰی علیہ السلام پرایمان لے آیاتھا لیکن اپنے ایمان کوچھپاتاتھ دل ہی دل میں موسٰی علیہ السلام سے محبت کرتاتھا اوراپنے آپ کوحضرت موسٰی علیہ السلام کافدع کرنے کاپابندسمجھتاتھا ۔
وہ نہایت زیرک ،سمجھداراورموقع شناس انسان تھا . منطق اوراستد لال میں نہایت قوی تھا اوراس قدر باسمجھ انسان تھا کہ نہایت ہی حساس لمحات میں حضرت موسٰی علیہ السلام کی مدد کوپہنچااور جیسا کہ بعد کی آیات میں سے پتہ چلے گا کہ حضرت موسٰی علیہ السلام کوقتل جیسی خطر ناک سازش سے نجات دلائی ۔
اسلامی روایات اورمفسرین کے اقوال میں اس شناس شخص کی بہت تعریف کی گئی ہے ۔
جن میں سے ایک یہ بھی ہے کہ بعض مفسرین کہتے ہیں کہ : وہ فرعون کاچچازاد بھائی تھا اورانہوں نے ” آل فرعون“ کی تعبیرکو بھی اس معنی پر گواہ سمجھاہے کیونکہ عموماً آل کااطلاق نزدیکی رشتہ داروں پر ہوتاہے ہرچند کہ دوست واحباب پر بھی لفظ بولاگیاہے ۔
بعض دوسرے مفسرین اسے اللہ کاایک نبی سمجھتے ہیں جس کانام ” حزبیل “ یاحزقیل تھا ( ۱)۔
بعض روایت کرتے ہیں کہ وہ فرعون کے ( گنجنیوں اورخزانوں کاسرپرست اور ) خازن تھا ( ۲)۔
ابن عباس سے روایت ہے کہ فرعون والوں میں سے صرف تین افراد حضرت موسٰی علیہ السلام پرایمان لاتے تھے ، ایک توموٴ من آل ِ فرعون ، دوسرے فر عون کی زوجہ او رتیسرے وہ شخص جس نے حضرت موسٰی کو نبوت ملنے سے پہلے خبر دار کیا کہ :
فرعون کے درباری اپنے ایک پیرو کارکے قتل کے بدلے آپ کوقتل کرناچاہتے ہیں لہذا جتنا جلدی ہو سکے آپ مصر سے نکل جائیں ۔ ( قصص . ۲۰)
لیکن کچھ ایسے قرئن بھی ملتے ہیں جن سے یہ پتہ چلتاہے کہ موسٰی علیہ السلام کے جادوگر وں کے ساتھ مقابلے کے بعد لوگوں کی بہت بڑی تعداد موسٰی پر ایمان لے آئی تھی اور بظاہر معلوم ہوتا ہے کہ موٴمن آل فرعون کاماجرا جادوگروں کے واقعے کے بعد کاہے ۔
بعض حضرات یہ بھی کہتے ہیں کہ موٴمن آل فرعون کاتعلق دراصل بنی اسرائیل سے تھا جو فرعونیوں میں گھل مل کرزندگی بسرکر رہاتھا اوراس پران کابہت حدتک اعتماد بھی تھا لیکن یہ احتمال کافی حد تک ضعیف نظر آتاہے کیونکہ یہ ایک تو” آل فرعون “ کی اور دوسرے ” یاقوم“ (اے میری قوم ) کی تعبیرسے ہم آہنگ نہیں ہے البتہ موسٰی اور بنی اسرائیل کی تاریخ میںاس کامسلم اورموٴثر کردار مکمل طور پر واضح ہے . اگرچہ اس کی زندگی کے تمام پہلو ہمیں آج تک واضح طور پر معلوم نہیں ہیں ۔
۱۔ یہ معنی پیغمبراسلام صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی ایک روایت سے نقل کیاگیاہے (ملاحظہ ہوامالی شیخ صدوق منقول با زتفسیر نور الثقلین جلد ۴ ،ص ۵۱۹ ) لیکن اگردیکھاجائے تو ” حزقیل “ نبی اسرائیل کے ابنیاء میں سے تھے . لہذا یہ احتمال بعید معلوم ہوتاہے اور مندرجہ بالاروایت بھی سند کے لحاظ سے ضعیف ہے . یہ اوربات ہے کہ یہ حز قیل بنی اسرائیل کے وہ مشہور بنی نہ ہوں بلکہ اس نام کاکوئی اور شخص ہو ۔
۲۔ یہ معنی علی بن ابراہیم کی تفسیرمیں بھی آیاہے (تفسیرنورالثقلین جلد ۴ ، ۵۱۸)۔
۲۔ تقیّہ ... مقابلے کاایک موٴثر ذریعہ آیا کسی کو خدا کی طرف بلانے پر بھی قتل کرتے ہیں ؟
12
13
14
15
16
17
18
19
20
Lotus
Mitra
Nazanin
Titr
Tahoma