مجالس عزاداری منعقد کرنے کی وصیت
صفحه کاربران ویژه - خروج
ورود کاربران ورود کاربران

LoginToSite

کلمه امنیتی:

یوزرنام:

پاسورڈ:

LoginComment LoginComment2 LoginComment3 .
ذخیره کریں
 

مجالس عزاداری منعقد کرنے کی وصیت

سوال: کیا مجالس عزاداری منعقد کرنے کے لیے ایمہ (علیہم السلام) کی طرف سے وصیت ذکر ہویی ہے ؟
اجمالی جواب:
تفصیلی جواب: امام حسین کے لیے مجالس عزاداری منعقد کرنا غم کے ایک عام طریقوں میں سے ہے درسگاہ حسینی کے طالب علم ایسی مجلس قایم کرکے امام حسین کے بلند ہدف ومقصد سے آگاہ ہوتے ہیں ،ان پر اور ان کے اصحاب پر آنسوں بہاتے ہیں اور یہ مجلسیں ہمیشہ لوگوں کوبیدار کرنے کا وسیلہ بنی ہیں ۔
امام صادق علیہ السلام نے اپنے ایک فضیل نامی صحابی سے فرمایا: کیا تم مجلس قایم کرتے ہو اور ایک دوسرے سے (اہل بیت کے فضایل اور دینی معارف کی) گفتگو کرتے ہو؟
فضیل نے جواب دیا :جی ۔
امام نے فرمایا:
ان تلک المجالس احبھا، فاحیوا امرنا، فرحم اللہ من احیا امرنا ۔(1) میں ایسی مجالس کو پسند کرتاہوں ۔ ہمارے مکتب کو باقی رکھو، خداوندعالم اس شخص پر رحمت کرے جو ہمارے مکتب کو باقی رکھے ۔
اس کے بعد امام نے اپنی بات کو جاری رکھتے ہویے فرمایا: ""جو ہم(ہمارے مصایب)کو یاد کرے یا اس کے پاس کویی ہماری یاد کرے اور اس کی آنکھوں سے آنسوں جاری ہوجاییں چہ جاییکہ وہ آنسوں کم ہوں خداوندعالم اس کے گناہوں کو بخش دے گا(2) ۔
حوالہ جات:

١۔ وسائل الشيعة، ج 10، ص 392.
2 . کتاب عاشورا ریشه ها، انگیزه ها، رویدادها، پیامدها، زیر نظر آیت الله مکارم شیرازی، ص82.
    
تاریخ انتشار: « 1392/07/01 »

منسلک صفحات

امام حسین (علیہ السلام) کی عزاداری میں کام وغیرہ کی چھٹی کرنا

عزاداری میں سر وسینہ پیٹنا

عزاداری میں نوحہ پڑھنا

مجالس عزاداری منعقد کرنے کی وصیت

عزاداری میں سیاہ کپڑے پہننا

CommentList
*متن
*حفاظتی کوڈ غلط ہے. http://makarem.ir
قارئین کی تعداد : 624