کوفیوں کو اپنی شہادت سے پہلے بھی دعوت دینا
صفحه کاربران ویژه - خروج
ورود کاربران ورود کاربران

LoginToSite

کلمه امنیتی:

یوزرنام:

پاسورڈ:

LoginComment LoginComment2 LoginComment3 .
ذخیره کریں
 

کوفیوں کو اپنی شہادت سے پہلے بھی دعوت دینا

سوال: کیا امام حسین (علیه السلام) نے مسلم بن عقیل کی شهادت کے بعد کوفیوں کو چهوڑ دیا تها؟
اجمالی جواب:
تفصیلی جواب: امام حسین (علیہ السلام) نے قلم و کاغذ طلب کیا اور بزرگان کوفہ کوجن کے متعلق آپ جانتے تھے کہ وہ اپنی رایے پر ثابت قدم اور باقی ہیں ، ایک خط لکھا اور حقیقت میں یہ اس خط کے مخاطب ، کوفہ کے عام لوگ تھے ، خط کا مضمون اس طرح ہے :
بِسْمِ اللهِ الرَّحْمنِ الرَّحیمِ، مِنَ الْحُسَیْنِ بْنِ عَلِىٍّ اِلى سُلَیْمانِ بْنِ صُرَد، وَ الْمُسَیِّبِ بْنِ نَجْبَهَ، وَ رُفاعَهِ بْنِ شَدّاد، وَ عَبْدِاللهِ بْنِ وال، وَ جَماعَهِ الْمُوْمِنِینَ، اَمّا بَعْدُ: فَقَدْ عَلِمْتُمْ اَنَّ رَسُولَ اللهِ(صلى الله علیه وآله) قَدْ قالَ فِی حَیاتِهِ: «مَنْ رَاى سُلْطاناً جایِراً مُسْتَحِلاًّ لِحُرُمِ اللهِ، ناکِثاً لِعَهْدِ اللهِ، مُخالِفاً لِسُنَّهِ رَسُولِ اللهِ، یَعْمَلُ فِى عِبادِاللهِ بِالاِثْمِ وَ الْعُدْوانِ ثُمَّ لَمْ یُغَیِّرْ بِقَوْل وَ لا فِعْل، کانَ حَقیقاً عَلَى اللهِ انْ یُدْخِلَهُ مَدْخَلَهُ». وَ قَدْ عَلِمْتُمْ اَنَّ هوُلاءِ الْقَوْمَ قَدْ لَزِمُوا طاعَهَ الشَّیْطانِ، وَ تَوَلَّوْا عَنْ طاعَهِ الرَّحْمنِ، وَ اَظْهَرُوا الْفَسادَ، وَ عَطَّلُوا الْحُدُودَ وَاسْتَاْثَرُوا بِالْفَیءِ، وَ اَحَلُّوا حَرامَ اللّهِ، وَ حَرَّمُوا حَلالَهُ، وَ اِنِّی اَحَقُّ بِهذَا الاَمْرِ لِقَرابَتِی مِنْ رَسُولِ اللّهِ(صلى الله علیه وآله). وَ قَدْ اَتَتْنی کُتُبُکُمْ، وَ قَدْ قَدِمَتْ عَلَىَّ رُسُلُکُمْ بِبَیْعَتِکُمْ اَنَّکُمْ لا تُسَلِّمُونی وَ لا تَخْذُلُونی، فَاِنْ وَفَیْتُمْ لِی بِبَیْعَتِکُمْ فَقَدْ اَصَبْتُمْ حَظَّکُمْ وَ رُشْدَکُمْ، وَ نَفْسی مَعَ اَنْفُسِکُمْ، وَ اَهْلی وَ وَلَدی مَعَ اَهالِیکُمْ وَ اَوْلادِکُمْ، فَلَکُمْ بِى اُسْوَهٌ، وَ اِنْ لَمْ تَفْعَلُوا وَ نَقَضْتُمْ عَهودَکُمْ، وَ خَلَّعْتُمْ بَیْعَتَکُمْ فَلَعَمْری ما هِىَ مِنْکُمْ بِنُکْر، لَقَدْ فَعَلْتُمُوها بِاَبی وَ اَخی وَابْنِ عَمِّی! وَالْمَغْرُورُ مَنِ اغْتَرَّ بِکُمْ، فَحَظُّکُمْ اَخْطَاْتُمْ، وَ نَصیبُکُمْ ضَیَّعْتُمْ (فَمَنْ نَّکَثَ فَاِنَّمَا یَنْکُثُ عَلَى نَفْسِهِ)(1) وَ سَیُغْنِى اللّهُ عَنْکُمْ، وَ السَّلامُ». ۔
اللہ کے نام سے جو بہت مہربان اور رحم کرنے والا ہے ۔
حسین بن علی (علیہما السلام کی طرف سے سلیمان بن صرد، مسیب بن نجبہ، رفاعه بن شداد ، عبداللہ بن وال اور تمام مومنین کے نام۔
اما بعد ۔ تم جانتے ہو کہ پیغمبر اکرم (صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم) نے اپنی زندگی میں فرمایا تھا :
جو شخص بھی کسی ایسے ظالم حاکم کو دیکھے جو خداوند عالم کے حلال کو حرام کر رہا ہوں اور خدا کے عہد و پیمان کو توڑ رہا ہو ، پیغمبر اکرم (ص) کی سنت کی مخالفت کررہا ہو اور اللہ کے بندوں کے درمیان ظلم و ستم سے کام لے رہا ہوں ،اس کے باوجود وہ شخص ایسے ظالم حاکم کے خلاف زبانی اور عملی سکوت اختیار کرے تو خداوند عالم کے لیے بہتر ہے کہ وہ ایسے شخص کو اسی ظالم حاکم کی جگہ پر جہنم میں داخل کردے ۔
تم جانتے ہو کہ یہ گروہ (بنی امیہ) شیطان کی اطاعت کا پابند ہوگیا اور خداوندعالم کی پیروی سے دور ہوگیا ہے اور فساد کو آشکار کردیا ہے ، حدود الہی کو بند کردیا ہے ، مسلمانوں کے بیت المال کو اپنے آپ سے مخصوص کرلیا ہے اور حرام خدا کو حلال اور حلال خدا کو حرام کردیا ہے ، لہذا میں پیغمبر اکرم (ص) سے اپنی قرابت اور نزدیکی کی وجہ سے ان سے جنگ کرنا بہتر سمجھتا ہوں ۔
دوسری طرف تمہارے خطوط مجھے ملے ہیں ، تمہارے بھیجے ہویے قاصد تمہاری بیعت کی خبر لے کر میرے پاس آیے اور انہوں نے کہا کہ تم نے میری بیعت کرلی ہے اور تم کبھی مجھے دشمن کے حوالہ نہیں کرو گے اور جنگ کے دوران مجھے تنہا نہیں چھوڑو گے اور میری طرف پشت نہیں کرو گے ۔ اب اگر تم نے اپنی بیعت پر پابند رہتے ہویے ، رشد و کمال حاصل کرلیا ہے ، تو میں تمہارے ساتھ اور میرا خاندان تمہارے خاندان کے ساتھ رہے گا ، میں تمہارے لیے نمونہ عمل اور تمہارا رہبر رہوں گا اور اگر تم نے ایسا نہ کیا اور اپنے عہدو پیمان پر ثابت نہ رہے اور اپنی بیعت کو توڑا، تو خدا کی قسم تمہارا یہ عمل غیر معروف اور عجیب نہیں ہوگا ! کیونکہ تم نے میرے والد ، بھایی اور چچازاد بھایی (مسلم) کے ساتھ بھی ایسا ہی کیا ہے ۔ دھوکا کھانے والا وہ ہے جو تمہارا دھوکا کھایے ، پس (اس صورت میں) تم نے سعادت کو کھو دیا اور اپنے فایدہ کو برباد کردیا ""جو بھی عہد شکنی کرے اس نے صرف اپنا نقصان کیا ہے "" اور خداوند عالم بہت جلد مجھے تم سے بے نیاز کردے گا ۔ والسلام (2) ۔
امام علیہ السلام نے خط پر مہر لگا کر قیس بن مسھر صیداوی کو دیا تاکہ وہ کوفہ کے لوگوں تک یہ خط پہنچا دے اور جب امام کو قیس کے قتل ہونے کی خبرملی تو آپ کی آنکھوں سے آنسوں جاری ہوگیے اور آپ نے فرمایا :
.. «اللّهُمَّ اجْعَلْ لَنا لِشیعَتِنا عِنْدَکَ مَنْزِلا کَریماً، وَ اجْمَعْ بَیْنَنا وَ بَیْنَهُمْ فِی مُسْتَقَرّ مِنْ رَحْمَتِکَ اِنَّکَ عَلى کُلِّ شَىْء قَدیر»;
خداوندا ! اپنے نزدیک ہمارے لیے اور ہمارے شیعوں کے لیے بہترین جگہ قرار دے اور ہمیں ان کے ساتھ اپنے جوار رحمت میں قرار دے کیونکہ تو ہر کام پر قادر ہے (3) ۔
امام علیہ السلام) نے اس خط میں کوفہ کے عام لوگوں (خصوصا کوفہ کے بزرگ افراد) کو دعوت دے کر ایک بار پھر حجت تمام کردی ۔ اس کے علاوہ آپ نے شیطان کی فوج اور فساد، کفر اور طغیان کے ذمہ داروں کے خلاف قیام کرنے کے متعلق ان کی اہم ذمہ داری کو بھی واضح کردیا ، دوسری طرف اپنی حمایت میں ان کے عہد و پیمان اور بیعت کو بھی یاد دلادیا ۔
یہ بات بھی قابل توجہ ہے کہ آپ نے اپنے قیام کو ان کے قیام سے مشروط نہیں کیا ہے اور آخری سانس تک جنگ کرنے کے اپنے عزم و جزم کوخدا وند عالم پر توکل کو بیان کیا ہے ۔
یہ خط ایک مرتبہ پھر امام حسین (علیہ السلام) کے مقدس کو اہداف کو واضح کرتا ہے ، ان اہداف میں نہ حکومت کی ہوس ہے اور نہ کسی عہدہ ومقام کی آروز، بلکہ ان ظالموں اور ستمگروں کے ساتھ جنگ کرنے کو بیان کررہے ہیں جنہوں نے الہی اقداروں کو پایمال کردیا (4)۔
حوالہ جات:
(1) . سوره فتح، آیه 10.
(2) . فتوح ابن اعثم، ج 5، ص 143-145 ; مقتل الحسین خوارزمى، ج 1، ص 234-235 و بحارالانوار، ج 44، ص 381-382.
(3) . فتوح ابن اعثم، ج 5، ص 147 و بحارالانوار، ج 44، ص 382.
(4) . آیت الله العظمی مکارم شیرازی کے زیر نظر کتاب: عاشورا ریشه ها، انگیزه ها، رویدادها، پیامدها، ص383 سے اقتباس .
    
تاریخ انتشار: « 1392/08/23 »

منسلک صفحات

عمر بن سعد کے ساتھ امام حسین (علیہ السلام) کی گفتگو

کوفیوں کو اپنی شہادت سے پہلے بھی دعوت دینا

CommentList
*متن
*حفاظتی کوڈ غلط ہے. http://makarem.ir
قارئین کی تعداد : 942