کیفیت حمل

سایٹ دفتر حضرت آیة اللہ العظمی ناصر مکارم شیرازی

صفحه کاربران ویژه - خروج
ورود کاربران ورود کاربران

LoginToSite

کلمه امنیتی:

یوزرنام:

پاسورڈ:

LoginComment LoginComment2 LoginComment3 .
ذخیره کریں
 

کیفیت حمل

سوال: حمل کی کیفیت کو دیکھنے کے بعد کس طرح خدا کے وجود تک پہونچتے ہیں ؟
اجمالی جواب:
تفصیلی جواب: خداى متعال سوره «آل عمران کی آیت ۶ ارشاد فرماتا ہے ( ہوَ الَّذِی یُصَوِّرُکُمْ فِی الْاٴَرْحَامِ کَیْفَ یَشَاءُ لاَإِلَہَ إِلاَّ ہُوَ الْعَزِیزُ الْحَکِیمُ ۔)
وہ ذات ہے جو ماوٴں کے رحم میں جیسی چاہتا ہے تمہاری صورت بناتا ہے ( اس لیے ) اس توانا اور حکیم خدا کے علاوہ کویی معبود نہیں ہے ۔
تفسیر
اِس آیت میں خدا کی قدرت ، دانایی اور حکمت کا شاہکار بیان کیا گیا ہے اور وہ یہ ہے کہ وہ شکم مادر میں انسا ن کی صورت بناتا ہے ۔ واقعاً یہ امر تعجب خیز اور حیرت انگیز ہے کہ رحم کے اندر خدا انسان کے مختلف خط و خال بناتا ہے طرح طرح کی استعداد پیدا کرتا ہے ، کیی قسم کی صفات عطا کرتا ہے اور جبلت و سر شت کی تشکیل کرتا ہے ۔
جنین کے مراحل ۔ تخلیق کا شاہکار
علم جنین شناسی کی ارتقاء نے آج کی دنیا میں اس آیت کے مفہوم کی عظمت کو بہت اجا گر کردیا ہے ۔
ابتداء میں جنین ایک خلیے (Cell)پر مشتمل ہوتا ہے ۔ اس وقت اس کی شکل و صورت ہوتی ہے نہ اعضا و جوارح ۔ اس میں کویی طاقت و توانایی بھی نہیں ہوتی ۔ پھر وہ عجیب سرعت سے رحم کے مخفی خانے میں ہر روز نیی شکل اور نیا نقش و نگارا پناتا ہے جیسے نقش و نگار کے ماہرین اس کے پاس بیٹھے ہیں اور شب و روز اس پر کام کررہے ہیں اور اس ناچیز ذرّے سے تھوڑا ہی عرصے میں ایک انسان بنا ڈالتے ہیں ، وہ انسان جس کا ظاہر بہت ہی آراستہ و پیراستہ ہوتا ہے اور اس کے وجود کے اندر صاف ستھرے،پیچیدہ دقیق اور حیرت انگیز کار خانے نظر آنے لگتے ہیں ۔ اب اگر مراحل جنین کی فلم لی جایے ( جیسا کہ لی بھی گیی ہے ) اور انسان کی آنکھوں کے سامنے یہ منظر یکے بعد دیگرے گزرتے رہیں تو انسان کو عظمت خلقت اور قدرتِ خالق سے ایک نیی آشنایی ہوگی اور وہ بے اختیار کہہ اٹھے گا ۔
زیبندہ ستایش ، آن آفرید گاری است کآر و چنین دل آویز ، نقشی زماء وطینی
وہ خالق لایق تعریف ہے جو ایسا دلاویز نقش پانی اور مٹی سے بنالایا ہے ۔
اور تعجب کی بات ہے کہ یہ تمام نقش و نگار پان پر ہیں جس کے متعلق مشہور ہے کہ اس نقش و نگار نہیں ہوسکتے!
کہ کردہ است در آب صورت گری ؟ یہ کون ہے کہ جس نے پانی پر صورتیں بنایی ہیں ؟
یہ امر قابل توجہ ہے کہ انعقادِ نطفہ کے بعد جبین اپنی پہلی شکل اختیار کرلیتا ہے تو تیزی سے تقسیم و افزایش کے عمل سے گزرتا ہے اور پھر شہ توت کے ایک پھل کی طرح ہوجاتا ہے جس کے چھوٹے چھوٹے دانے ایک دوسرےسے ملے ہوتے ہیں ۔ اسے مرولاکہتے ہیں ۔ عین اِس پیش رفت کے موقع پر خون کا ایک لوتھڑا جسے جفت کہتے ہیں اس کے قریب ارتقایی حالت میں ہوتا ہے ۔ ایک طرف سے جفت دو شر یانوں اور ایک ورید کے ذریعے مال کے دل سے ملا ہوتا ہے اور دوسری طرف بند ناف کے ذریعے جنین سے مربوط ہوتا ہے اور جنین خونِ جفت سے غذا حاصل کرتا ہے کیونکہ غذایی مواد خونِ جفت میں موجود ہوتا ہے ، غذا ملنے، ارتقایی سفر طر کرنے اور خلیوں کا باہر کی طرف رخ کرنے سے مرولا کا اندرونی حصّہ آہستہ آہستہ خالی ہوجاتا ہے جسے بلاسٹولا کہتے ہیں ۔ زیادہ دقت نہیں گزرتا کہ بلاسٹولا کے خلیوں کی تعداد میں اضافہ ہوجاتا ہے اب بلا سٹولا دو تہوں والے تھیلے کی شکل اختیار کرلیتا ہے ۔پھر وہ اپنے اندر کی طرف سکڑ نا شروع کردیتا ہے جس کے نتیجے میں بچہ دو حصّوں یعنی سینہ اور شکم میں تقسیم ہوجاتا ہے ۔
یہ امر قابل توجہ ہے کہ اس مرحلے تک تمام خیلے ایک دوسرے کے مشابہ ہوتے ہیں اور ظاہرا ً ان میں کویی فرق نہیں ہوتا ۔ اس مرحلے کے بعد جنین کی سورت بنے لگتی ہے اور اس کے اجزاے میں آیندہ انجام پانے والے کاموں کی مناسبت سے تغیر آنے لگتا ہے ۔ نیے تانے بانے بنے لگتے ہیں اور نیی مشینیں حرکت میں آجاتی ہیں اور خیلوں کا ایک ایک گروپ بن کر کسی ایک مشین کو اپنے ذمے لے لیتا ہے ۔ مثلا ً اعصاب کی مشین ، گردش، خون اور معدے کا عمل وغیرہ اس کے نتیجہ میں جنین رحم کے مخفی خانے میں ایک موزوں انسان کی شکل اختیار کرلیتا ہے ۔
تکامل جنین اور ا س کے مختلف مراحل کی تفصیل انشاء اللہ سورہ مومنون کی آیت ۱۲ کے ذیل میں پیش کی جایے گی ۔
ابتدایے سورہ میں جو شان نزول بیان کی گیی ہے اسے نگاہ میں رکھیں تو اس آیت کا مقصدواضح ہوجاتا ہے اس میں حضرت عیسیٰ ﷼کی پیدایش اور عیساییوں کے عقاید کی طرف اشارہ کیا گیا ہے کہ جب خود عیسایی قبول کرتے ہیں کہ حضرت مسیح ﷼شکم مادر میں پروان چڑھے اور انہوں نے خود اپنے تییں پیدا نہیں کیالہٰذا وہ کسی پید اکرنے والے کی مخلوق ہیں کہ جس نے عالم رحم میں اس طرح سے ان کی ہییت و صورت بنایی ہے ۔ اس لیے کیسے ممکن ہے کہ حضرت مسیح ﷼ خدا ہوں ۔
"لآ الٰہ الاّ ھو العزیز الحکیم "۔
اس جملے میں تاکید کی گیی ہے کہ حقیقی معبود صرف خدایے قادر و حکیم ہے جو نہ صرف رحم مادر میں پانی کے قطرے پر خوبصورت اور نیی نیی شکلیں بناتا ہے بلکہ اس کی قدرت و حکمت پوری کاینات پر محیط ہے اس یے حضرت مسیح ﷼ جیسی مخلوق کو کس طرح معبود قرار دیا جاسکتا ہے وہ مخلوق کہ جو اپنے سارے وجود اور ہستی میں تمام مراحل میں ا س کی قدرت وحکمت کی محتاج ہے1 ۔
حوالہ جات:
1. تفسیر نمونه، جلد2، صفحه 498.
    
تاریخ انتشار: « 1392/01/14 »

منسلک صفحات

کیفیت حمل

CommentList
*متن
*حفاظتی کوڈ غلط ہے. http://makarem.ir
قارئین کی تعداد : 479