حدیث ولایت کے مضمون کی تائید کرنے والی روایتیں
صفحه کاربران ویژه - خروج
ورود کاربران ورود کاربران

LoginToSite

کلمه امنیتی:

یوزرنام:

پاسورڈ:

LoginComment LoginComment2 LoginComment3 .
ذخیره کریں
 

حدیث ولایت کے مضمون کی تائید کرنے والی روایتیں

سوال: کیا اہل سنت کی حدیث کی کتابوں میں ایسی روایتیں موجود ہیں جو حدیث ولایت کے مضمون کی تایید کرتی ہوں؟
اجمالی جواب:
تفصیلی جواب:  اہل سنت کی حدیث کی کتابوں میں مراجعہ کرنے کے بعد ایسی حدیثیں ملتی ہیں جو حدیث ""ولایت"" کے مضمون کی تایید کرتی ہیں یہاں پر ہم ا ن میں سے بعض کی طرف اشارہ کرتے ہیں :

١۔ پیغمبر اکرم (صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم) نے حضرت علی (علیہ السلام) کو مخاطب کرکے فرمایا:"" انت ولی کل مومن بعدی و مو منه"" تم میرے بعد ہر مومن اور مومنہ کے ولی ہو (١) ۔
٢۔ نیز آپ نے فرمایا:
"" علی ولیی فی کل مومن بعدی "" ۔ علی میرے بعد میری طرف سے ہر مومن کے ولی ہیں (٢)
٣ ۔ آپ نے فرمایا:
"" علی منی بمنزلتی من ربی "" علی میرے نزدیک ایسے ہی ہیں جس طرح میں خدا کے نزدیک ہوں (٣) ۔
٤ ۔ دوسری جگہ آپ نے فرمایا:
"" علی ولیی المومنین من بعدی "" ۔ علی میرے بعد تمام مومنین کے ولی ہیں (٤) ۔
٥۔ زیاد بن مطرف نے کہا ہے : میں نے رسول خدا (صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم) سے سنا ہے کے آپ نے فرمایا:
"" من احب ان یحیی حیاتی و یموت میتتی و یدخل و یدخل الجنه التی و عدنی ربی وھی جنه الخلد فلیتول علیا و ذریتہ من بعدہ، فانہم لن یخرجوکم باب ھدی ولن یدخلوکم باب ضلاله ""
جو شخص بھی میری زندگی کی طرح زندگی رکھنے اور میری موت کی طرح موت آنے کو پسند کرتا ہے اور اس جنت میں داخل ہونا چاہتا ہے جس کا میرے پروردگار نے مجھ سے وعدہ کیا ہے جو کہ جنت خلد ہے تو اس کو علی اور ان کے بعد ان کی ذریت کی ولایت کو قبول کرنا چاہیے، کیونکہ یہ تم کو ہدایت سے خارج نہیں کریں گے اور گمراہی میں داخل نہیں کریں گے (٥) ۔
٦۔ عمار بن یاسر کہتے ہیں : رسول خدا (صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم) نے فرمایا:
"" اوصی من آمن بی وصدقتنی بولایه علی بن ابی طالب، فمن تولاہ فقد تولانی و من تولانی فقد تولی اللہ و من احبہ فقد احبنی و من احبنی فقد احب اللہ ومن ابغضہ فقد ابغضنی و من ابغضنی فقد ابغض اللہ عزوجل"" جو بھی مجھ پر ایمان لایا ہے اور علی بن ابی طالب کی ولایت پر میری تصدیق کرتا ہے میں اس کو سفارش کرتا ہوں ، پس جو بھی ان کی ولایت کو قبول کرے گا اس نے میری ولایت کو قبول کیا اور جس نے میری ولایت کو قبول کیا اس نے خدا کی ولایت کو قبول کیا ہے ۔ اور جو ان کو دوست رکھتا ہے وہ مجھے بھی دوست رکھتا ہے اور جو مجھے دوست رکھتا ہے وہ خدا کو دوست رکھتا ہے ۔ اور جو ان سے دشمنی رکھتا ہے وہ مجھ سے بھی دشمنی رکھتا ہے اور جومجھ سے دشمنی رکھتا ہے وہ خداوند عالم سے بھی دشمنی رکھتا ہے (٦) ۔
حدیث غدیراور آیت ""ولایت""کے ذیل میںجو روایتیں وارد ہویی ہیں وہ بھی احادیث ""ولایت"" کے صادق ہونے پر گواہ ہیں (٧) ۔

حوالہ جات:

١۔ مسند احمد، ج 1، ص 544، ح 3052; مستدر ک حاکم، ج 3، ص 143.
٢۔ مسند احمد، ج 1، ص 545; صحیح مسلم، ج 2، ص 24.
٣۔ سیرہ حلبیہ، ج 3، ص 362.
٤۔ تاریخ بغداد، ج 4، ص 339.
٥۔ مناقب خوارزمی، ص 34.
٦۔ ترجمہ امام علی(علیہ السلام) از تاریخ ابن عساکر، ج 2، ص 93، ح 594; کنز العمال، ج 6، ص 155; مجمع الزوائد، ج 9، ص 108.
٧۔ علی اصغر رضوانی، امام شناسی و پاسخ بہ شبہات(2)، ص 163.
    
تاریخ انتشار: « 1396/02/06 »

منسلک صفحات

ترمذی کا عمران سے حدیث ولایت کونقل کرنا

ابوداود کا ابن عباس سے حدیث ولایت کونقل کرنا

احمدبن حنبل کا حدیث ولایت کوابن عباس سے نقل کرنا

احمدبن حنبل کا حدیث ولایت کوبریدہ سے نقل کرنا

احمدبن حنبل کا حدیث ولایت کو عمران بن حصین سے نقل کرنا

CommentList
*متن
*حفاظتی کوڈ غلط ہے. http://makarem.ir
قارئین کی تعداد : 755