اہل سنت کی کتابوں میں پیغمبر اکرم (صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم) کے جانشینوں کی تعداد
صفحه کاربران ویژه - خروج
ورود کاربران ورود کاربران

LoginToSite

کلمه امنیتی:

یوزرنام:

پاسورڈ:

LoginComment LoginComment2 LoginComment3 .
ذخیره کریں
 

اہل سنت کی کتابوں میں پیغمبر اکرم (صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم) کے جانشینوں کی تعداد

سوال: اہل سنت کی روایات کے مطابق پیغمبر اکرم (صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم) نے اپنے کتنے جانشین بتایے ہیں؟
اجمالی جواب:
تفصیلی جواب: رسول خدا (صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم) کے بعد بارہ امام اور خلیفہ والی احادیث کو اہل سنت نے اپنی صحاح اور مساندی میںجابر، سمره اور دیگرروات سے نقل کیا ہے ۔ یہ حدیثیں اسلامی فرقوں کے نزدیک اس قدر مشہور ہوییں کہ ان میں کویی شک و شبہ باقی نہیں رہ گیا ہے ، ہم یہاں پر ان میں سے بعض کی طرف اشارہ کرتے ہیں :

١۔ بخاری نے اپنی سند کے ساتھ جابر بن سمره سے نقل کیا ہے کہ پیغمبر اکرم (صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم) نے فرمایا: ""یکون اثنا عشر امیرا، فقال کلمه لم اسمعھافقال ابی : انہ قال : کلھم من قریش "" ۔ میرے بعد امیر ہوں گے ، اس کے بعد آپ نے ایک بات کہی جو میں نے نہیں سنی، میرے والد نے کہا کہ پیغمبر اکرم (صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم) نے فرمایا : وہ سب قریش سے ہوں گے (١) ۔
٢۔ مسلم نے اپنی سند کے ساتھ جابر بن سمره سے نقل کیا ہے کہ جابر نے کہا : میں اپنے والد کے ساتھ پیغمبر اکرم (صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم) کی خدمت میں گیا تومیں نے سنا کہ رسول خدا (صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم) فرمارہے ہیں :
""ان ھذا الامر لا ینقضی حتی یمضی فیھم اثناعشر خلیفہ : قال : ثم تکلم بکلام خفی علی ، قال : فقلت لابی ما قال ؟ قال : کلھم من قریش "" ۔ یہ سلسلہ ختم نہیں ہوگا یہاں تک کہ ان کے درمیان بارہ خلیفہ آییں گے ، اس کے بعد آپ نے کچھ کہا جو میں سن نہیں سکا تو میں نے اپنے والد سے سوال کیا کہ رسول خدا (صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم) نے کیا کہا : میرے والد نے جواب میں کہا : وہ بارہ خلیفہ قریش سے ہوں گے (٢) ۔
٣۔ مسلم نے جابر سے نقل کیا ہے کہ جابر کہتے ہیں میں نے رسول خدا (صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم) کو فرماتے ہویے سنا:
لا یزال امر الناس ماضیا ما ولیھم اثنا عشر رجلا، ثم تکلم النبی (صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم) بلکمه خفیت علی فسالت ابی ماذا قال رسول اللہ ؟ فقال : کلھم من قریش "" ۔ لوگوں کے کام جاری و ساری رہیںگے یہاں تک کہ بارہ امام ان کے اوپر حاکم ہوں گے ، اس کے بعد انہوں نے ایک کلمہ کہا جس کو میں سن نہیں سکا میں نے اپنے والد سے سوال کیا کہ رسول خدا (صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم) نے کیا فرمایا ہے : انہوں نے کہا کہ سب کے سب قریش سے ہوں گے (٣) ۔
٤۔ جابر سے نقل ہوا ہے کہ رسول خدا (صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم) نے فرمایا:
""لایزال الاسلام عزیزا الی اثنی عشر خلیفه، ثم قال کلمه لم افھمھا فقلت لابی ما قال؟ فقال : کلھم من قریش"" اسلام عزیز باقی رہے گا یہاں تک کہ اس پر بارہ خلیفہ حاکم ہوں گے ، اس کے بعد آپ نے ایک کلمہ کہا جس کو میں نہیں سمجھ سکا ، میں نے اپنے والد سے پوچھا رسول خدا نے کیا فرمایا ہے ؟ انہوں نے کہا : پیغمبر اکرم (صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم) نے فرمایا ہے : وہ سب قریش سے ہوں گے (٤) ۔
٥۔ نیز جابر سے نقل ہوا ہے کہ جابر نے کہا : میں اپنے والد کے ساتھ پیغمبر اکرم (صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم) کی خدمت میں پہنچا ، میں نے سنا کہ رسول خدا (صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم) فرمارہے ہیں :
""لایزال ھذا الدین عزیزا منیعا الی اثنی عشر خلیفہ، فقال کلمه صمنیھا الناس فقلت لابی ما قال ؟ قال : کلھم من قریش "" ۔ یہ دین اس وقت تک باقی اور قایم ہے جب تکہ بارہ خلیفہ نہ آجاییں ، اس کے بعد آپ نے ایک بات کہی ، لوگوں کے شور کی وجہ سے میںاس بات کو سن نہیں سکا ، میں نے اپنے والد سے عرض کیا : آنحضرت (صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم) نے کیا فرمایا ہے : میرے والد نے کہا ، پیغمبر اکرم (صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم) نے فرمایا ہے کہ وہ سب قریش سے ہوں گے (٥) ۔
٦۔ سعد بن ابی وقاص کہتے ہیں : میں نے جابر بن سمره کو لکھا کہ مجھے ان باتوں کی خبر دو جن کو تم نے پیغمبر اکرم (صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم) سے سنا ہے ، انہوں نے مجھے لکھا : جمعہ کے روز جس رات میں اسلمی کو رجم کیا گیا تھا میں نے رسول خدا (صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم) سے سنا کہ آپ نے فرمایا:
"" لا یزال الدین قایما
حتی تقوم الساعه او یکون علیکم اثنا عشر خلیفه کلھم من قریش"" ۔
دین ہمیشہ دایم و قایم ہے یہاں تک کہ بارہ خلیفہ تم پر حکومت کریں گے جو سب کے سب قریش سے ہوں گے (٦) ۔
٧۔ طبرانی نے جابر سے نقل کیا ہے کہ میں اپنے والد کے ساتھ پیغمبر اکرم (صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم) کے پاس تھا ، آنحضرت (صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم) نے فرمایا :
"" یکون لھذہ الامه اثنا عشر قیما، لا یضرھم من خذلھم، ثم ھمس رسول اللہ بکلمه لم اسمعھا فقلت لابی : ماالکلمه التی ھمس بھا النبی (صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم) ؟ قال : کلھم من قریش "" ۔ میری امت کے بارہ امیر ہیں اور لوگوں کی برایی ان کو کویی نقصان نہیں پہنچایے گی اس کے بعد آپ نے آہستہ سے کچھ کہا جس کو میں سن نہیں سکا ، میں نے اپنے والد سے کہا : پیغمبر اکرم (صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم) نے آہستہ سے کیا فرمایا ہے : انہوں نے کہا : آنحضرت (صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم) نے فرمایا ہے : وہ سب قریش سے ہوں گے (٧) ۔
٨۔ جابر سے نقل ہوا ہے کہ پیغمبر اکرم (صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم) نے فرمایا :
"" لا یزال ھذا الامر ظاھرا علی من ناواہ لا یضر مخالف و لا مفارق حتی یمضی من امتی اثنا عشر خلیفه من قریش"" ۔ ہمیشہ یہ دین اپنے مخالفین پر غالب اور اپنی جگہ پر قایم و دایم ہے ، یہاں تک کہ اس کے بارہ خلیفہ مالک ہوں گے ، پھر لوگوں نے شور مچانا شروع کردیا جس کی وجہ سے میں یہ نہیں سن سکا کہ آپ نے ""کلھم"" کے بعد کیا فرمایا ہے میں نے اپنے والد سے سوال کیا تو انہوں نے کہا کہ پیغمبر اکرم (صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم) نے فرمایا: وہ سب کے سب قریش سے ہوں گے (٨) ۔
٩۔ احمد بن حنبل نے بھی جابر بن سمرہ سے نقل کیا ہے کہ رسول خدا (صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم) نے ہمارے سامنے جو خطبہ ارشاد فرمایا اس میں کہا :
""لا یزال ھذا الامر عزیزا منیعا ظاھرا علی من ناواہ حتی یملک اثنا عشر کلھم۔ قال فلم افھم ما بعد قال: فقلت لابی ما قال؟ قال کلھم من قریش "" ۔ یہ دین ہمیشہ قایم و دایم ہے یہاں تک کہ میرے بارہ خلیفہ آییں گے اس کے بعد آپ نے کچھ فرمایا جس کو میں نہیں سن سکا کیونکہ لوگوں نے شوروغل کردیا تھا ، میں نے اپنے والد سے کہا : آنحضرت نے کیا فرمایا؟ انہوں نے کہا پیغمبر اکرم (صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم) نے فرمایا: کلھم من قریش (٩) ۔
١٠۔ دوسری حدیث میں جابر کہتے ہیں : پیغمبر اکرم (صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم) کے کلام کے بعد لوگوں نے تکبیر کہی اور چیخ ماری ....(١٠) ۔
١١۔ نیز جابر نے نقل کیا ہے کہ رسول خدا (صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم) نے عرفات میں اور ایک قول کی بناء پر منی میں خطبہ دیا اور فرمایا :
لن یزال ھذا الامر عزیزا ظاھرا حتی یملک اثنا عشر، کلھم، ثم لغط القوم و تکلموا فلم افھم قولہ بعد (کلھم) ۔ فقلت لابی : یا ابتاہ ! ما بعد کلھم ؟ قال کلھم من قریش""۔ ہمیشہ یہ دین نافذ اورغالب ہے یہاں تک کہ بارہ نفر حاکم ہوںگے ، اس وقت سب لوگوں نے شورکرنا شروع کردیا اور بہت زیادہ شور وغل ہوگیا لہذا میں یہ نہیں سن سکا کہ ""کلھم"" کے بعد کیا فرمایا، میں نے اپنے والد سے پوچھا کہ پیغمبر اکرم (صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم) نے کیا فرمایا : انہوں نے کہا کہ پیغمبر اکرم (صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم) نے فرمایا ہے وہ سب کے سب قریش سے ہوں گے (١١) ۔
١٢۔ نیز پیغمبر اکرم (صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم) نے فرمایا :
""لایزال ھذا الدین عزیزا منیعا ..."" الی اثنی عشر خلیفه۔ قال : فجعل الناس یقومون و یقعدون"" یہ دین قایم و دایم ہے ... یہاں تک کہ بارہ خلیفہ آییں گے ، پھر لوگوں نے کھڑے ہونا اور بیٹھنا شروع کردیا (١٢) ۔ (١٣) ۔

حوالہ جات:

١۔ صحیح بخاری ، ج ٨، ص ١٢٧، کتب الاحکام، باب الاستخلاف، ح ٧٢٢٣۔
٢۔ صحیح مسلم، ج ٦، ص ٣، شرح صحیح مسلم، ج ١٢، ص ٢٠١۔
٣۔ صحیح مسلم، ج ٦، ص ٣، شرح صحیح مسلم، ج ١٢، ص ٢٠١۔
٤۔ صحیح مسلم، ج ٦، ص ٣۔
٥۔ صحیح مسلم، ج ٦، ص ٣۔
٦۔ صحیح مسلم، ج ٦، ص ٣۔
٧۔ المعجم الکبیر، ج٢، ص ١٩٦، ح ١٧٩٤۔
٨۔ المعجم الکبیر، ج٢، ص ١٩٦، ح ١٧٩٦۔
٩۔ مسند احمد ، ج ٥، ص ٩٣، ح ٢٠٩٢٣۔
١٠۔ مسند احمد ، ج ٥، ص ٩٣، ح ٢٠٩٢٣۔
١١۔ مسند احمد ، ج ٥، ص ٩٩۔
١٢۔ مسند احمد ، ج ٥، ص ٩٩۔
١٣۔ علی اصغر رضوانی، امام شناسی و پاسخ بہ شبھات (٢) ، ص ٢٥٣) ۔
    
تاریخ انتشار: « 1395/12/03 »

منسلک صفحات

حضرت علی (علیہ السلام) کے علم اور حکمت پر خلیفہ دوم کی گواہی

کلمہ ”خلیفہ“ کے متعلق ایک تحقیق

اہل سنت کی کتابوں میں پیغمبر اکرم (صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم) کے جانشینوں کی تعداد

شیعوں کی کتابوں میں پیغمبر اکرم (صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم ) کے جانشینوں کی تعداد

CommentList
*متن
*حفاظتی کوڈ غلط ہے. http://makarem.ir
قارئین کی تعداد : 749